امارات کی مسلح افواج کے 30،000 اہلکار کوویڈ – 19 ویکسین وصول کر رہے ہیں

متحدہ عرب امارات میں قومی حکمت عملی کے تحت خدمت گار اور خواتین، سویلین عہدیدار اور مسلح افواج میں بھرتی افراد کو ویکسین کے زریعے بچایا گیا ہے

مسلح افواج کے 30،000 اہلکار کوویڈ – 19 ویکسین وصول کر رہے ہیں

متحدہ عرب امارات کی مسلح افواج کے 30،000 سے زیادہ ممبران اور قومی خدمت میں بھرتی ہونے والوں کو کوویڈ 19 کے خلاف ٹیکے لگائے گئے ہیں۔

میڈیکل سروسز کور کی کمانڈر، بریگیڈ جنرل ڈاکٹر عائشہ ال دھہری نے کہا کہ یہ مہم اس وبائی امراض کے پیش نظر فوجی جوانوں کے تحفظ کی کلید ہے۔

متحدہ عرب امارات نے ستمبر میں متحدہ عرب امارات میں فیز 3 ٹرائلز کے بعد چینی منشیات ساز کمپنی سونوفرم کے ذریعہ تیار کردہ کوویڈ 19 ویکسی نیشن کے محدود استعمال کی منظوری دی تھی۔

امارات میں یہ ویکسین کن افراد کو دی گئی ہے

اس کے بعد یہ فرنٹ لائن میڈیکل ورکرز، پولیس ، سینئر عہدیداروں اور متحدہ عرب امارات کی کابینہ کے ممبروں، جس میں نائب صدر اور دبئی کے حکمران، شیخ محمد بن راشد بھی شامل ہے، کے زیر انتظام ہے۔

وزارت دفاع کے زیر اہتمام ایک آن لائن کانفرنس میں ڈاکٹر الثہری نے کہا کہ جب جب مقدمے کی سماعت آئی تو ہم نے اپنی آبادی کی ایک بڑی تعداد کو حصہ لینے کی ترغیب دی۔

“ہم نے امارات میں حفاظتی قطرے پلانے کے مراکز قائم کیے ہیں اور اس کا مقصد اپنی تمام فوجی آبادی کو ویکسین دینا ہے۔”

کانفرنس میں سنا گیا کہ اس وائرس کے خلاف جاری لڑائی کے لئے بین الاقوامی تعاون کلیدی حیثیت اختیار کرے گا۔

ڈاکٹر الہہری

ڈاکٹر الہہری نے ویکسین کے بارے گفتگو کرتے ہووے کہا امارات اسرائیل کے ساتھ کوویڈ 19 کے سانس لینے والا ٹیسٹ پر مل کر کام کر رہی ہے جو 30 سیکنڈ میں معاملات کا پتہ لگانے کے قابل ہے۔

فی الحال، بڑے بیچوں میں عملدرآمد کرنے میں پی سی آر ناک کے زریعے کیے جانے والے ٹیسٹ میں کم از کم ایک دن لگ سکتا ہے۔

وزیر مملکت برائے دفاعی امور، محمد البوردی نے کہا، کوویڈ 19 کو نہ صرف نمٹانے کے لئے، نہ صرف ایک ساتھ ملنے والی ایجنسیوں کی اہمیت پر زور دیا، بلکہ بحرانوں اور باہمی تشویش کے علاقوں کو حل کرنے کے ایک وسیع مقصد کے حصے کے طور پر سامنے آیا ہے۔

انہوں نے کہا، “اگرچہ جدید خطرات صرف مخصوص جغرافیائی علاقوں تک ہی محدود نہیں رہ سکتے ہیں، بلکہ اس کی بجائے ریاست کی سرحدوں تک پھیل رہے ہیں، لہذا ریاستوں کے مابین باہمی تعاون کی اہمیت اور بحرانوں کا سامنا کرتے ہوئے بین الاقوامی اتحاد کو بڑھانا ہے۔”

آن لائن پروگرام کے دوران، وزارت دفاع نے نوجوانوں کو اپنے کام میں شامل کرنے کے لئے ایک پہل کے آغاز کا اعلان کیا۔

You might also like