دبئی میں پانچ سال سے زائد عمر کے دس لاکھ مہاجر بچوں کی تعلیم کیلیے ڈیجیٹل اسکول کا آغاز

متحدہ عرب امارات میں مقیم پانچ سال سے زائد عمر کے دس لاکھ مہاجر بچوں کی تعلیم کیلیے ڈیجیٹل اسکول کا آغاز آئندہ سال 2021 میں کیا جارہا ہے

مہاجر بچوں کی تعلیم کیلیے ڈیجیٹل اسکول کا آغاز

عرب دنیا کے سٹوڈنٹس کی پہلی کھیپ ستمبر 2021 میں شامل ہوگی

ایک ڈیجیٹل اسکول جو بدھ کے روز دبئی سے شروع ہونے والے اگلے پانچ سالوں میں دس لاکھ مہاجر اور پسماندہ بچوں کو تعلیم فراہم کرنا چاہتا ہے۔

محمد بن راشد گلوبل انیشیٹوز اس پروجیکٹ کے پیچھے ہے جس میں طلباء کی پہلی کھیپ ستمبر 2021 میں اسکول Digitalschool.org میں شامل ہوگی۔

اسکول مہاجر بچوں کی تعلیم کا مرکز ہوگا

عراق ، شام ، لبنان اور اردن سمیت ممالک کے مہاجر بچوں کی توجہ کا مرکز ہے۔ ایم بی آر جی آئی دنیا کے مختلف حصوں میں تعلیم کی وزارتوں سے اسکول کے لئے منظوری کے خواہاں ہے۔ ایک منظور شدہ اسکول ڈپلومہ طلباء کو یونیورسٹی میں داخلہ لینے میں مدد فراہم کرے گا۔

ایک پائلٹ نے اس مہینے میں 20،000 سٹوڈنٹس کے ساتھ داخلہ لیا تھا اور اگلے سال اگست تک چلے گا۔

انہیں عربی اور بین الاقوامی نصاب میں دستیاب ڈیجیٹل لرننگ کے مواد تک رسائی حاصل ہوگی۔

نائب صدر اور دبئی کے حکمران شیخ محمد بن راشد نے اسکول کو “عرب دنیا میں سائنسی اور تعلیمی خلا” پر کرنے کے طور پر بیان کیا۔

دبئی میں پانچ سال سے زائد عمر کے دس لاکھ مہاجر بچوں کی تعلیم کیلیے ڈیجیٹل اسکول کا آغاز

انہوں نے کہا “ہمارے پاس لاکھوں بچے ہیں جو معاشی حالات یا تنازعات کی وجہ سے سالوں کی تعلیم سے محروم رہتے ہیں۔ اور اگر کوئی ان چیلنجوں کا ازالہ نہیں کرتا ہے تو ایسی نسلیں جہالت اور انتہا پسندی کی طرف راغب ہوں گی، جن کی بجائے وہ اپنے آبائی علاقوں کو علم و معرفت کی روشنی میں گامزن کردیں گے۔”

وزیر مملکت عمر العلما

مصنوعی ذہانت، ڈیجیٹل اکانومی اور ریموٹ ورک ایپلی کیشن کے وزیر مملکت عمر العلما نے کہا کہ بچوں کو روشن مستقبل فراہم کرنے کی تعلیم کلیدی حیثیت رکھتی ہے۔

مصنوعی ذہانت ، ڈیجیٹل اکانومی اور ریموٹ ورک ایپلی کیشن کے وزیر مملکت عمر العلما نے کہا، “ہم نے تاریخ میں پڑھا ہے کہ اگر آپ کسی ملک کا مستقبل تبدیل کرنا چاہتے ہیں تو، تعلیم کو تبدیل کرنا چاہیے۔”

You might also like